مکمل اور سخت ترین لاک ڈاؤن کی تجویز اور سفارش

کراچی (ویب ڈیسک) وزیرِ اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے ایک بار پھر وفاق کو 2 ہفتے کے لیے مکمل لاک ڈاؤن کرنے پر زور دیا ہے، ان کا کہنا ہے کہ اسمارٹ لاک ڈاؤن کچھ نہیں ہوتا، مکمل لاک ڈاؤن اور انٹرسٹی ٹرانسپورٹ بند کر کے کورونا وائرس کی وباء کا زور توڑنا ہوگا۔

وزیرِ اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ اسلام آباد کی احتساب عدالت میں پیش ہوئے جہاں انہوں نے صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ 2 ہفتے کے لیے بین الصوبائی ٹرانسپورٹ بند کریں تو ہی کووڈ کا زور ٹوٹے گا۔وزیرِ اعلیٰ سندھ نے تجویز پیش کی کہ کم از کم 2 ہفتے کے لیے انٹر سٹی ٹرانسپورٹ بند کریں، اسمارٹ لاک ڈاؤن، مائیکرو لاک ڈاؤن کچھ نہیں ہوتا۔ان کا کہنا ہے کہ سندھ حکومت نے جو اقدامات کیئے ان سے کورونا وائرس کی وباء اتنی نہیں پھیلی، سندھ حکومت نے انٹر سٹی ٹریفک بند کی، جس سے کیسز میں کمی ہوئی۔مراد علی شاہ نے کہا کہ وفاقی حکومت نے سندھ حکومت کے لاک ڈاؤن کا مذاق اڑایا، وفاق کہتا ہے کہ معیشت بچانی ہے، حالانکہ ہماری معیشت سب سے کمزور ہے، معیشت کی تباہی کی وجہ سے ہی وزیر کو نکالنا پڑا۔وزیرِ اعلیٰ سندھ کا کہنا ہے کہ حکومتِ سندھ کی کورونا وائرس کی پالیسیوں کی وجہ سے پورے ملک کو فائدہ ہوا، یا لاک ڈاؤن کریں یا نہ کریں، اسمارٹ لاک ڈاؤن کچھ نہیں۔انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کی وباء بہت خطرناک ہے، مجھ میں اینٹی باڈیز ہیں، میں پھر بھی کورونا سے ڈرا ہوا ہوں، ہمارے ہاں آٹے میں نمک کے برابر بھی ویکسین نہیں لگی ہے، ہم ویکسین لگا نہیں سکے، ویکسین لا نہیں سکے۔مراد علی شاہ کا کہنا ہے کہ سندھ کے پاس اس وقت دیگر صوبوں سے زیادہ وینٹی لیٹرز موجود ہیں، کورونا پر حکومتِ سندھ کے اقدامات کو سب نے فالو کیا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *